The Group of Frog

ایک دفعہ مینڈکوں کا ایک گروپ جنگل سے گذر رہا تھا تو ان میں سے دو گہرے گڑھے میں گر گئے۔ جب دوسرے مینڈکوں نے گڑھے کے آس پاس ہجوم کیا اور دیکھا کہ وہ کتنا گہرا ہے تو انہوں نے دونوں مینڈکوں کو بتایا کہ ان کے پاس کوئی امید باقی نہیں ہے۔وہ اب یہاں سے باہر نہیں نکل سکیں گے۔

تاہم ، دونوں مینڈکوں نے دوسروں کی باتوں کو نظر انداز کرنے کا فیصلہ کیا اور وہ کوشش کرتے ہوئے آگے بڑھے اور گڑھے سے باہر نکلنے کے لیے کوشش کر تے رہے۔

ان کی کوششوں کے باوجود وہ ابھی تک ناکام رہے ،جب کہ گڑھے کے اوپری حصے میں مینڈکوں کا گروہ ابھی بھی کہہ رہا تھا کہ انہیں بس چھوڑ دینا چاہئے۔ کہ وہ یہاں سے کبھی نہیں نکل پائیں گے۔

آخر کار ، ان میں سے ایک مینڈک نے دوسروں کے کہنے پر دھیان دیا اورہمت ہار دی اور مر گیا۔ دوسرا مینڈک ابھی بھی چھلانگ لگا رہا تھا۔ ایک بار پھر ، مینڈکوں کے ہجوم نےاس کو یہ بتانے کی کوشش کی کہ وہ ناکام ہو جاے گا اس کو اتنی محنت اب نہیں کرنی چاہیے۔

اس نے اور زیادہ کوشش شروع کر دیاور آخر کا باہر نکل آیا۔ جب وہ باہر نکلا تو دوسرے مینڈکوں نے کہا ، “کیا آپ نےہماری باتیں نہیں سنی؟”

مینڈک نے انہیں سمجھایا کہ وہ بہرا ہے۔ میں نے سوچا کہ آپ سارا وقت میری حوصلہ افزائی کر تےرہے ہیں۔

کہانی کا اخلاقی سبق:
لوگوں کی باتوں کا اثر دوسروں کی زندگیوں پر پڑ سکتا ہے۔ آپ کے منہ سے نکلنے سے پہلے اس کے بارے میں سوچیں۔ یہ صرف زندگی اور موت کے درمیان فرق ہوسکتا ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *